[size=x-large][align=center]
بدلی ہے ایسی عالم اسلام کی فضا
ایمان کا چمن ہے نہ کردار کی ہوا

ہر غم ہے لاعلاج تو ہر درد لادوا
اب مرکز فساد ہے بغداد و سامرہ

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

ظلم و جفا و جور کا ہے ایسا سلسلہ
دینِ خدا ہے کربِِ مسلسل میں مبتلا

ہوتی ہے ہر یزید کی تائید برملا
طوفان شرک سرحد بصرہ تک آچکا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

خطرہ میں*ہر طرف سے ہے اسلام کا وجود
پھر آرہے ہیں مطلعِ تاریخ پر یہود

وجہ سکوں شراب ہے اصل حیات سود
جیسے یزید شام کا پھر دور آگیا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

اک مصدرِ علوم شریعت تھا جو عراق
اب اس کا گوشہ گوشہ ہے اک مرکز نفاق

ہر صبح اک فساد ہے ہر شام افتراق
بربادیوں کی زو پہ ہے روضہ شہید کا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

نذر خزاں ہے سارا شریعت کا گلستاں
محوِ سکوتِ مرگ ہیں امت کے پاسباں

لکھے گا کون خون سے مذہب کی داستاں
اب کوئی جان بنتِ پیمبر صلی اللہ علیہ وسلم نہیں رہا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

مشرق میں جب سے رکھے ہیں شیطان نے قدم
ایمان کا ہے وقار نہ کردار کا بھرم

کاغذ کے بدلے بکتے ہیں بازار میں قلم
ہر ہر قدم پہ ہوتا ہےسودا اصول کا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

بے شرم ایسی امت بے دین ہوگئی
جیسے کہ مر کے قابلِ تلقین ہوگئی

رنگین خون سے ارضِ فلسطین ہوگئی
اور شور ہے کہ دین کو خطرہ نہیں رہا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

امت میں تاب شعلہ بیانی نہیں رہی
اسلام کے لہو میں روانی نہیں رہی

ایماں کی زندگی ہے جوانی نہیں رہی
درکار عصر نو کو ہے اکبر علیہ السلام کا حوصلہ

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

اکاد خوش ہے کوئی خمینی نہیں ہے اب
بغداد خوش ہے کوئی کلینی نہیں ہے اب

بیداد خوش ہے کوئی حسینی نہیں ہے اب
اب کوئی چارہ ساز نہیں آپ کے سوا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

کیونکر نہ قلب دین و شریعت ہو داغ داغ
اسلام کا مدینہ میں ملتا نہیں سراغ

قبر رسول صلی اللہ علیہ وسلم پاک پہ جلتا نہیں چراغ
ہے کون اب جو خون سے روشن کرے دیا

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

مولا کلیم عصر کی ہے بس یہ التجا
دکھلا دو جلد جلوہء*انوار مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم

دیکھے جہاں جلال جگر بندِ مرتضی علیہ السلام
ٹھہرے کہیں تو گریہء زہرا سلام اللہ علیہا کا سلسلہ

یَا وَارِثَ الحُسَینِ تُنَا دِیکَ کَربَلا

(علامہ السید ذیشان حیدر جوادی )

[/align][/size]