نتائج کی نمائش 1 تا: 3 از: 3

موضوع: بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا

  1. #1
    رکنِ خاص
    تاريخ شموليت
    Nov 2011
    پيغامات
    527
    شکریہ
    31
    49 پیغامات میں 71 اظہار تشکر

    بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا

    بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا
    وہ شوخ آج شام لبِ بام بھی نہ تھا

    دردِ فراق ہی میں کٹی ساری زندگی
    گرچہ ترا وصال بڑا کام بھی نہ تھا

    رستے میں ایک بھولی ہوئی شکل دیکھ کر
    آواز دی تو لب پہ کوئی نام بھی نہ تھا

    کیوں دشتِ غم میں خاک اُڑاتا رہا منیر
    میں جو قتیلِ حسرتِ ناکام بھی نہ تھا


  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے ایم-ایم کا شکریہ ادا کیا:

    نگار (11-25-2013)

  3. #2
    رکنِ خاص نگار کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Dec 2011
    پيغامات
    5,360
    شکریہ
    663
    357 پیغامات میں 424 اظہار تشکر

    جواب: بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا

    رستے میں ایک بھولی ہوئی شکل دیکھ کر
    آواز دی تو لب پہ کوئی نام بھی نہ تھا


    زبردست ایم ایم بھائی خوب

  4. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے نگار کا شکریہ ادا کیا:

    ایم-ایم (11-25-2013)

  5. #3
    ناظم خاص تانیہ کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    مقام
    گجرات
    پيغامات
    7,922
    شکریہ
    952
    882 پیغامات میں 1,109 اظہار تشکر

    جواب: بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا

    رستے میں ایک بھولی ہوئی شکل دیکھ کر
    آواز دی تو لب پہ کوئی نام بھی نہ تھا
    واہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University