نتائج کی نمائش 1 تا: 4 از: 4

موضوع: ایک تحریر !!! غور کیجیے گا

  1. #1
    رکنِ خاص ملہار کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2013
    پيغامات
    162
    شکریہ
    347
    74 پیغامات میں 103 اظہار تشکر

    ایک تحریر !!! غور کیجیے گا

    ﻣﻐﺮﺏ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﻮئے ﺍﯾﮏ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺳﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﭘﮍﯼ ﻋﻤﺮ ﯾﮩﯽ ﮐﻮﺋﯽ 14 ﯾﺎ 15 ﺳﺎﻝ ﮨﻮﮔﯽ ﭘﺮ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﯿﺎ ﺑﺎﺕ ﺗﮭﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﮎ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﮦ ﻧﮧ ﺩیکھ ﭘﺎئے ،
    ﻭﮦ بچہ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﺘﮯ ہوئے ﺟﮭﺠﮏ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ، ﻧﻤﺎﺯﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻗﺪﻡ ﺑﮍﮬﺎﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ،
    ﻣﯿﮟ سمجھ ﮔﯿﺎ کہ ﺍﺱ لڑکے ﮐو ضرور ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺴﺌﻠﮧ درپیش ﮨﮯ۔
    ﺧﯿﺮ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﻤﺎﺯﯼ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﮱ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ لڑکا ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﭨﯿﮏ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ بیٹھ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﮕﻠﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﮌﮬﯽ ﺗﺮﭼﮭﯽ ﻟﮑﯿﺮﯾﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﺑﮭﯽ ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ کا ﺣﺎﻝ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﮐﺴﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ ﺳﻮ ﺍﺳﮑﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﮐﺮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﮨﯽ بیٹھ ﮔﯿﺎ ، ﻣﺠﮭﮯ ﺩیکھ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺍٹھ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮨﺎتھ
    ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ: ’’ﮐﯿﺎ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﯿﺮﻭ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﻮ؟’’
    جواب ملا: "کچھ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ"۔
    ﯾﮧ ﮐﮧ ﮐﺮ ﻭﮦ ﭘﮭﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﻭﺭ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﮨﺎتھ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ روکا ﺍﻭﺭ کہا کہ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮨﻮﮞ ، ﺗﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﺗﻮ ﮨﻮ ﮔﮯ؟
    (ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﮐﮯ ﻣﺤﻠﮯ ﮐﮯ لڑکے ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺳﺐ ﮨﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ)۔
    ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻢ ﮐﺴﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ۔ ﺩﯾﮑﮭﻮ! ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﺗﻨﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﻭﺍﻻ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺣﻞ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﭘﺮ ﯾﺎﺭ ﺟﺘﻨﺎ ﮨﻮﺳﮑﺎ ﺍﺗﻨﺎ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﺐ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺑﺮﺳﻨﺎ ﭼﺎﮦ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻥ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺳﺎﻭﻥ ﮐﯽ ﺑﭙﮭﺮﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﺮﺱ ﭘﮍﯾﮟ۔ ﯾﮧ ١٥ ، ١٤ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﺑﮩﺖ ﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺑﭽﮧ ﺍﺱ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﺌﯽ ﻧﺌﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ ، ﻣﺤﺴﻮﺳﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺩکھ ﯾﺎ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﻣﻄﻠﺐ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ اسے بہت ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﭼﭗ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ پھر اﺳﮯ ﮐﺮﯾﺪﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺟﻮ کچھ ﺍس نے ﮐﮩﺎ ﻭﮦ ﺁﭖ ﻟﻮﮔﻮں ﺳﮯ ﺷﯿﺌﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ۔

    * * *
    ﻣﯿﮟ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ، اللہ ﻗﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ۔ کچھ ﻋﺮصہ ﭘﮩﻠﮯ ﺟﺐ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﻟﯿﻨﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ تو انہیں ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮔﻮﻟﯽ ﻣﺎﺭ ﺩﯼ ، ﭘﻮﻟﯿﺲ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮩﺘﮯ ہیں کہ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺍﺑﻮ ﮐﯽ "ﭨﺎﺭﮔﭧ ﮐﻠﻨﮓ" ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ ﺍﻣﯽ نے ﻓﯿﮑﭩﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮنا شروع کردیا لیکن جب وہ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﻮﮔﺌﯿﮟ ﺗﻮ ﮐﺎﻡ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﻣﯽ ﺑﮩﺖ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﯿﮟ ، ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎتیں ، ﺷﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ کہا کہ امی اگر آپ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎئیں ﮔﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻮﻟﻮﮞ ﮔﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﻣﯽ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﯽ ، کہہ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ کہ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﭘﯿﺴﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ؟ اب تو ﺩﮐﺎﻥ ﻭﺍﻻ ﺍﺩﮬﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ عرصہ ہوا تمہارے چچا ، تایا وغیرہ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁئے۔
    ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻣﯽ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ کہ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﯿﻠﻨﮯ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﻋﺼﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﯽ ﺗﻮ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﮦ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﺎﻧﮓ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺍﺳﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﺐ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺩﮬﺮ ﺁﭖ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ آﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺍﻣﯽ ﮐﻮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﮯﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ۔ لیکن ﺟﺐ میں نے مانگنے کی کوشش کی تو میں نہ تو ہاتھ پھیلا سکا اور نہ ہی میری آواز نکلی ، مجھے ابّو ﯾﺎﺩ ﺁﮔﮱ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ کچھ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺑﻮ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﭩﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔ اب ﺍﮔﺮ ﺑﮭﯿﮏ ﻣﺎﻧﮕﻮﮞ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﻭﺭ ﺧﻔﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ، ﭘﺮ ﭘﯿﺴﮯ نہ ﮨﻮئے ﺗﻮ ﺍﻣﯽ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﭘﺎﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎئیں ﮔﯽ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎئیں ، پھر میرا کیا ہوگا؟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ؟
    ۔
    ۔

    ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ سننے کی ﮨﻤّﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ اپنے آنسو روکے اور اسے ﮔﻠﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﺎ۔ جیب میں پاکٹ منی کی تھوڑی سی رقم تھی ، ﺳﻮ ﺍﺳﮑﮯ ﮔﮭﺮ گیا ، ﻭﮨﺎﮞ ﺍس کی ﻭﺍﻟﺪﮦ ﺳﮯ ﻣﻼ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﺷﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ لے کرگئے۔ اس کے بعد ایک طویل کہانی ہے کہ کس طرح میں نے اپنے والد صاحب کو قائل کیا کہ ان کی مستقل مدد کرنی چاہیے۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﮭﯿﮓ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮﺅﮞ ﺳﮯ نہ جاﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﮨﯽ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮐﻠﯿﺎﮞ
    ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﮐﮯ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﺗﻠﮯ ﮐﭽﻠﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﻮﮞ ﮔﯽ۔

    ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ اللہ تعالیٰ ﻧﮯ مناسب ﻣﺎﻝ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺁﺯﻣﺎﺋﺶ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻻ ﮨﮯ کہ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﻼﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ نہ ﻣﻠﮯ۔ ﯾﮧ ﺁﭘﮑﺎ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﭘﮑﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺷﺘﮯﺩﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﮍﻭﺳﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺎﻟﺖ ﺧﻮﺩ ﺳﻤﺠﮭﺌﮯ۔ ڈھائی فی صد تو فرض ہے، اپنے ہاتھ کھولئے اور کثرت سے صدقہ و خیرات کیجیے۔ میں دروازے پر مانگنے والوں کی بات نہیں کررہا ہوں ، باہر نکلیے اور مستحق لوگوں کو ڈھونڈ کر ان کی مدد کیجیے۔ یقین کیجیے سب کچھ یہیں رہ جائے گا ، سوائے اُس (الباقیات الصالحات) کے جو آپ نے آگے بھیجا۔ ﯾﮧ ﭘﯿﺴﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﮐﮭﯽ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ نہ ﮨﻮ۔ ﻣﯿﮟ ﺁپ کو ﻭﮦ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺟﻮ ﺳﭽﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﺪﻟﮯ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺩکھ ﺑﺎﻧﭧ ﮐﺮ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﮩﺖ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﭽﺎ ﻟﯿﺠﺌﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﻣﻮﺗﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻣﭩﯽ ﺗﮏ نہ ﭘﮩﻨﭽﻨﮯ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﻭﺭﻧﮧ ﯾﮧ نمی مٹی تک پہنچنے سے پہلے بہت تیزی سے ﻋﺮﺵ ﺗﮏ جا پہنچتی ﮨﮯ۔ اس سے پہلے کہ
    اللہ تعالیٰ کی بے آواز لاٹھی وار کرے ، اٹھیں ﺍﻭﺭ دوسروں کی مدد کریں۔


  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے ملہار کا شکریہ ادا کیا:

    شاہنواز (12-01-2013)

  3. #2
    رکنِ خاص شاہنواز کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Mar 2012
    مقام
    کراچی پیارا پاکستان
    پيغامات
    968
    شکریہ
    610
    371 پیغامات میں 497 اظہار تشکر

    جواب: ایک تحریر !!! غور کیجیے گا

    جزاک اللہ

  4. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے شاہنواز کا شکریہ ادا کیا:

    ملہار (12-01-2013)

  5. #3
    ناظم خاص تانیہ کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    مقام
    گجرات
    پيغامات
    7,868
    شکریہ
    949
    880 پیغامات میں 1,107 اظہار تشکر

    جواب: ایک تحریر !!! غور کیجیے گا

    نائس شیئرنگ ۔۔۔۔۔۔۔جزاک اللہ



  6. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل 2 اراکین نے تانیہ کا شکریہ ادا کیا:

    شاہنواز (12-02-2013),ملہار (12-01-2013)

  7. #4
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,161
    شکریہ
    2,126
    1,234 پیغامات میں 1,606 اظہار تشکر

    جواب: ایک تحریر !!! غور کیجیے گا

    ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ اللہ تعالیٰ ﻧﮯ مناسب ﻣﺎﻝ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺁﺯﻣﺎﺋﺶ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻻ ﮨﮯ کہ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﻼﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ نہ ﻣﻠﮯ۔ ﯾﮧ ﺁﭘﮑﺎ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﭘﮑﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺷﺘﮯﺩﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﮍﻭﺳﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺎﻟﺖ ﺧﻮﺩ ﺳﻤﺠﮭﺌﮯ۔ ڈھائی فی صد تو فرض ہے، اپنے ہاتھ کھولئے اور کثرت سے صدقہ و خیرات کیجیے۔ میں دروازے پر مانگنے والوں کی بات نہیں کررہا ہوں ، باہر نکلیے اور مستحق لوگوں کو ڈھونڈ کر ان کی مدد کیجیے۔ یقین کیجیے سب کچھ یہیں رہ جائے گا ، سوائے اُس (الباقیات الصالحات) کے جو آپ نے آگے بھیجا۔ ﯾﮧ ﭘﯿﺴﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﮐﮭﯽ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ نہ ﮨﻮ۔ ﻣﯿﮟ ﺁپ کو ﻭﮦ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺟﻮ ﺳﭽﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﺪﻟﮯ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺩکھ ﺑﺎﻧﭧ ﮐﺮ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﮩﺖ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﭽﺎ ﻟﯿﺠﺌﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﻣﻮﺗﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻣﭩﯽ ﺗﮏ نہ ﭘﮩﻨﭽﻨﮯ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﻭﺭﻧﮧ ﯾﮧ نمی مٹی تک پہنچنے سے پہلے بہت تیزی سے ﻋﺮﺵ ﺗﮏ جا پہنچتی ﮨﮯ۔ اس سے پہلے کہ
    اللہ تعالیٰ کی بے آواز لاٹھی وار کرے ، اٹھیں ﺍﻭﺭ دوسروں کی مدد کریں۔

    بہت ہی پر اثر تحریر ہے ، جزاک اللہ
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

  8. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل 2 اراکین نے بےباک کا شکریہ ادا کیا:

    شاہنواز (12-02-2013),ملہار (12-02-2013)

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University