نتائج کی نمائش 1 تا: 4 از: 4

موضوع: حضرت علی کے اقوالِ زریں

  1. #1
    ناظم
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    1,307
    شکریہ
    0
    50 پیغامات میں 68 اظہار تشکر

    حضرت علی کے اقوالِ زریں

    انسان زبان کے پردے میں چھپا ہے۔

    ادب بہترین کمال ہے،اور خیرات افضل ترین عبادت ہے ۔

    جو چیز اپنے لئے پسند کرو وہ دوسروں کے لئے بھی پسند کرو ۔

    بھوکے شریف اور پیٹ بھرے کمینہ سے بچو ۔

    گناہ پرندامت گناہ کو مٹا دیتی ہے ۔ نیکی پر غرور نیکی کو تباہ کردیتا ہے ۔

    سب سے بہترین لقمہ وہ ہے جو اپنی محنت سے حاصل کیا جائے ۔

    جو پاک دامن پر تہمت لگاتا ہے اُسے سلام مت کرو
    ۔
    موت کو ہمیشہ یاد رکھو مگر موت کی آرزو کبھی نہ کرو۔


    اگر توکل سیکھنا ہے تو پرندوں سے سیکھو کہ جب شام کو واپس گھر جاتےہیں تو ان کی چونچ میں کل کے لئے کوئی دانہ نہیں ہوتا ہیں ۔


    سب سے بڑا گناہ وہ ہے جو کرنے والے کی نظر میں چھوٹا۔


    اس شخض کو کبھی موت نہیں آتی جو علم کو زندگی بخشتا ہے ۔


    دو طرح سے چیزیں دیکھنے میں چھوٹی نظر آتی ہیں ایک دور سے دوسرا غرور سے۔

    کسی کو اس کی ذات اور لباس کی وجہہ سے حقیر نہ سمجھنا کیونکہ تم کو دینے والا اور اس کو دینے والا ایک ہی ہے اللہ ۔ وہ یہ اُسے عطا اور آپ سے لے بھی سکتا ہے ۔


    دوست کو دولت کی نگاہ سے مت دیکھو ، وفا کرنے والے دوست اکثر غریب ہوتے ہیں ۔


    پریشانی حالات سے نہیں خیالات سے پیدا ہوتی ہے ۔


    بہترین آنکھ وہ ہے جو حقیقت کا سامنا کرے ۔


    دنیا میں سب سے مشکل کام اپنی اصلاح کرنا اور آسان کام دوسروں پر تنقید کرنا ہے ۔


    نفرت دل کا پاگل پن ہے ۔

    انسان زندگی سے مایوس ہوتو کامیابی بھی ناکامی نظر آتی ہے ۔


    اگر کوئی تم کو صرف اپنی ضرورت کے وقت یاد کرتا ہے تو پریشان مت ہونا بلکہ فخر کرنا کے اُس کو اندھیروں میں روشنی کی ضرورت ہے اور وہ تم ہو ۔


    [size=x-large] ناراضگی ظاہر کرنا دل میں برائی رکھنے سے بہتر ہے[/size]

  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے گلاب خان کا شکریہ ادا کیا:

    ملہار (02-05-2014)

  3. #2
    ناظم
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    1,307
    شکریہ
    0
    50 پیغامات میں 68 اظہار تشکر

    جواب: حضرت علی کے اقوالِ زریں


    حضرت علی مر تضٰی رضی اللہ عنہ کے اقوال ملاحظہ فرمائے

    پریشانی خاموش رہنے سے کم ،صبر کرنے سے ختم اور شکر کرنے سے خوشی میں بدل جاتی ہے۔



    جو تمہیں غم کی شدت میں یاد آئے تو سمجھ لو کہ وہ تم سے محبت کرتا ہے۔


    کبھی کسی کے سامنے صفائی پیش نہ کرو،کیوں کہ جسے تم پر یقین ہے ، اسے ضرورت نہیں اور جسے تم پر یقین نہیں وہ مانے گا نہیں۔


    ہمیشہ سچ بولو کہ تمہیں قسم کھانے کی ضرورت نہ پڑے ۔


    انسانوں کے دل وحشی ہیں جو انہیں موہ لے ، اسی پر جھک جاتے ہیں۔


    جب عقل پختہ ہوجاتی ہے ،باتیں کم ہوجاتی ہیں۔


    جو بات کوئی کہے تو اس کے لئے ُبرا خیال اس وقت تک نہ کرو، جب تک اس کا کوئی اچھا مطلب نکل سکے۔


    دنیا کی مثال سانپ کی سی ہے کہ چھونے میں نرم اور پیٹ میں خطرناک زہر۔۔


    کسی کے خلوص اور پیار کو اس کی بے وقوفی مت سمجھو ، ورنہ کسی دن تم خلوص اور پیار تلاش کروگےاور لوگ تمہیں بے وقوف سمجھیں گے ۔


    جو بھی برسر اقتدار آتا ہے ، وہ اپنے آپ کو دوسروں پر ترجیح دیتا ہے۔


    بھوکے شریف اور پیٹ بھرے کمینے سے بچو ۔




    لوگوں کو دعا کے لئے کہنے سے زیادہ بہتر ہے ایسا عمل کرو کہ لوگوں کے دل سے آپ کے لئے دعا نکلے۔


    مومن کا سب سے اچھا عمل یہ ہے کہ وہ دوسروں کی غلطیوں کو نظر انداز کردے ۔


    سب سے بڑاعیب یہ ہے کہ وہ دوسروں کی غلطیوں کو نظر انداز کردے ۔


    سب سے بڑا عیب یہ ہے کہ تم کسی پر وہ عیب لگا ؤ جو تم میں خود ہے۔


    جو ذرا سی بات پر دوست نہ رہے ، وہ دوست تھا ہی نہیں ۔


    جس کو ایسے دوست کی تلاش ہو ، جس میں کوئی خامی نہ ہو ، اسے کبھی بھی دوست نہیں ملتا ۔


    انصاف یہ نہیں کہ بد گمانی پر فیصلہ کردیا جائے ۔


    حکمت مومن کی کھوئی ہوئی چیز ہے ، حکمت خواہ منافق سے ملے لے لو ۔


    کسی کی مدد کرتے وقت اس کے چہرے کی جانب مت دیکھو ، ہوسکتا ہے اس کی شرمندہ آنکھیں تمہارے دل میں غرور کا بیج بودیں ۔


    صبر کی توفیق مصیبت کے برابر ملتی ہے ،اور جس نے اپنی مصیبت کے وقت ران پر ہاتھ مارا ، اس کا کیادھرا اکارت گیا ۔


    موت کو ہمیشہ یاد رکھو ، مگر موت کی آرزو کبھی نہ کرو ۔


    قناعت وہ دولت ہے جو ختم نہیں ہوسکتی ۔
    - f

    [size=x-large] ناراضگی ظاہر کرنا دل میں برائی رکھنے سے بہتر ہے[/size]

  4. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل 2 اراکین نے گلاب خان کا شکریہ ادا کیا:

    بےباک (02-05-2014),ملہار (02-05-2014)

  5. #3
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,204
    شکریہ
    2,189
    1,260 پیغامات میں 1,635 اظہار تشکر

    جواب: حضرت علی کے اقوالِ زریں



    لوگوں کو دعا کے لئے کہنے سے زیادہ بہتر ہے ایسا عمل کرو کہ لوگوں کے دل سے آپ کے لئے دعا نکلے۔


    مومن کا سب سے اچھا عمل یہ ہے کہ وہ دوسروں کی غلطیوں کو نظر انداز کردے ۔


    سب سے بڑاعیب یہ ہے کہ وہ دوسروں کی غلطیوں کو نظر انداز کردے ۔


    سب سے بڑا عیب یہ ہے کہ تم کسی پر وہ عیب لگا ؤ جو تم میں خود ہے۔


    جو ذرا سی بات پر دوست نہ رہے ، وہ دوست تھا ہی نہیں ۔


    جس کو ایسے دوست کی تلاش ہو ، جس میں کوئی خامی نہ ہو ، اسے کبھی بھی دوست نہیں ملتا ۔

    بہت ہی خوب گلاب خان ،
    جزاک اللہ
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

  6. #4
    رکنِ خاص ملہار کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2013
    پيغامات
    162
    شکریہ
    347
    74 پیغامات میں 103 اظہار تشکر

    جواب: حضرت علی کے اقوالِ زریں

    جزاک اللہ

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University