نتائج کی نمائش 1 تا: 3 از: 3

موضوع: ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪوں کا بھی خیال رکھیں۔۔!!

  1. #1
    رکنِ خاص ملہار کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2013
    پيغامات
    162
    شکریہ
    347
    74 پیغامات میں 103 اظہار تشکر

    ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪوں کا بھی خیال رکھیں۔۔!!




    ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﮐﺴﯽ ﺟﻨﮕﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﻦ ﭼﺎﺭ ﺑﺮﺳﻮﮞ ﺗﮏ ﺑﺎﺭﺵ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ ۔ﺷﺪﯾﺪ ﺧﺸﮏ ﺳﺎﻟﯽ ﻧﮯ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﻮ ﻗﺤﻂ ﺯﺩﮦ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮯ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﮯ ﺑﯿﺸﺘﺮ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﻋﻼﻗﮧ ﭼﮭﻮﮌﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮔﺌﮯ۔ﺟﻮ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ ﺍُﻧﮩﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ﺍُﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﯽ ﻭﮦ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﭼﮍﯾﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﺗﮭﯽ۔ﯾﮧ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﯼ ﺑﮭﯽ ﮐﺌﯽ ﺩﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﻮﮐﯽ ﭘﯿﺎﺳﯽ ﺗﮭﯽ ۔ﺍﺱ ﺁﺱ ﭘﺮ ﮐﮧ ﺷﺎﺋﺪ ﮐﺴﯽ ﺩﺭﺧﺖ ﺳﮯ ﺍُﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ ،ﺍُﺱ ﻧﮯ ﮐﺌﯽ ﻣﯿﻞ ﮐﯽ ﻣﺴﺎﻓﺖ ﻃﮯ ﮐﺮﻟﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺍُﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﭘﯿﮍ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺟﻮ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺑﮭﻮﮎ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺱ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺑﻨﺘﺎ ۔ﺍُﺱ ﻧﮯ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﺭﺯﻕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﯽ۔ﺍﺳﯽ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﯾﮏ ﺷﯿﺮ ﮐﯽ ﻏﺮّﺍﮨﭧ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮨﯽ ﻟﻤﺤﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﭨﺎ ﺗﺎﺯﮦ ﮨﺮﻥ ﺷﯿﺮ ﮐﮯ ﭘﻨﺠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﺷﯿﺮ ﺧﻮﺏ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﮏ... ﻃﺮﻑ ﮨﻮﮐﮯ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ۔ﺍﺏ ﺑﭽﮯ ﮐﮭﭽﮯ ﮨﺮﻥ ﮐﻮ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﺟﻤﻊ ﺗﮭﮯ۔ﺷﯿﺮ ﻧﮯ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﻣﻨﮧ ﮐﮭﻮﻻ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺩﺍﻧﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻨﺴﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﮯ ﺭﯾﺸﮯ ﺍُﺳﮯ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺩﺭﺧﺖ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﭼﮍﯾﺎ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﻨﻈﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﮌﺍﻥ ﺑﮭﺮﯼ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺪﮬﯽ ﺷﯿﺮ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﭘﺮ ﺁﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﺌﯽ۔ﺍﺏ ﻭﮦ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺩﺍﻧﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺭﯾﺸﮯ ﻧﮑﺎﻟﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﺗﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺷﯿﺮ ﮐﻮ ﭼﮍﯾﺎ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻋﻤﻞ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺭﺍﺣﺖ ﭘﮩﻨﭽﺎﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﭼﮍﯾﺎ ﭘﻮﺭﯼ ﻃﺮﺡ ﺳﯿﺮ ﮨﻮﮔﺌﯽ “ ﺁﭖ ﮐﻮ ﭘﺘﮧ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺷﯿﺮ ﮨﺮﻥ ﮐﻮ ﮐﮭﺎﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﺳﮯ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺁﺳﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮨﺮﻥ ﮐﻮ ﺷﯿﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﯽ ﺍﺱ ﻧﻨﮭﯽ ﭼﮍﯾﺎ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﮨﺮﻥ ﭼﮍﯾﺎ ﮐﯽ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺗﮭﺎ ۔ْ“ ﯾﺎ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺩﯾﮟ ﮐﮧ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﻼ ﮨﮯ ﺻﺤﺖ، ﻋﻘﻞ، ﺣﺴﻦ، ﻃﺎﻗﺖ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﺟﺐ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﺍﺳﺒﺎﺏ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﮐﮯ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ،ﺁﭖ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍُﻥ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪ ﮨﯿﮟ۔ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺟﻦ ﮐﺎ ﺷﻤﺎﺭ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺗﺮﯾﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮐﺎﻓﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﻼﺋﮯ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﻭﻧﺎﺩﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﮯ ۔ ﺍﮔﺮ ﺁﭘﮑﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮨﮯ ،ﻃﺎﻗﺖ ﻭﺭ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺷﯿﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺯﻕ ﮐﮯ ﺣﺼﻮﻝ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺎﻗﺖ، ﺫﮨﺎﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺎ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﻣﺖ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﻭ۔ ﺩﯾﮑﮭﻮ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺍﺭﺩ ﮔﺮﺩ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺍُﺱ ﭼﮍﯾﺎ ﮐﯽ ﺳﯽ ﮨﮯ ،ﺟﻮ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﯿﮟ،ﺑﮯ ﺑﺲ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﺭﺯﻕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺑﮧ ﻇﺎﮨﺮ ﯾﮧ ﺭﺯﻕ ﺍُﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﺗﻮﺳﻂ ﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﻞ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ “ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﺠﺪﺩ ﺍﻟﻒ ﺛﺎﻧﯽ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﺎ ﻗﻮﻝ ﮨﮯ " ﺟﻮ ﺣﻖ ﺩﺍﺭ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﻧﺎﺣﻖ ﮐﺎ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺗﺠﮭﮯ ﺟﻮ ﻧﺎﺣﻖ ﮐﺎ ﻣﻞ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﻣﻠﻨﺎ ﺑﻨﺪ ﻧﮧ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ

  2. #2
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,205
    شکریہ
    2,192
    1,260 پیغامات میں 1,635 اظہار تشکر

    جواب: ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪوں کا بھی خیال رکھیں۔۔!!

    سبق آموز کہانی ہے ،
    جزاک اللہ ،ملہار جی
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

  3. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے بےباک کا شکریہ ادا کیا:

    ملہار (02-08-2014)

  4. #3
    ناظم خاص تانیہ کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    مقام
    گجرات
    پيغامات
    7,924
    شکریہ
    952
    882 پیغامات میں 1,109 اظہار تشکر

    جواب: ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪوں کا بھی خیال رکھیں۔۔!!

    جزاک اللہ



  5. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے تانیہ کا شکریہ ادا کیا:

    ملہار (02-09-2014)

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University