نتائج کی نمائش 1 تا: 2 از: 2

موضوع: اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں

  1. #1
    رکنِ خاص
    تاريخ شموليت
    Jun 2014
    پيغامات
    3,602
    شکریہ
    650
    709 پیغامات میں 735 اظہار تشکر

    اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں


    اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو
    اُس جھیل کنارے پل دو پل
    اک خواب کا نیلا پھول کھلے
    وہ پھول بہا دیں لہروں میں
    اک روز کبھی ہم شام ڈھلے
    اُس پھول کے بہتے رنگوں میں
    جس وقت لرزتا چاند چلے
    اُس وقت کہیں ان آنکھوں میں اس بسرے پل کی یاد تو ہو
    اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو
    پھر چاہے عُمر سمندر کی
    ہر موج پریشاں ہو جائے
    پھر چاہے آنکھ دریچے سے
    ہر خواب گریزاں ہو جائے

    پھر چاہے پھول کے چہرے کا
    ہر درد نمایاں ہو جائے
    اُس جھیل کنارے پل دو پل وہ روپ نگر ایجاد تو ہو
    دن رات کے اس آئینے سے وہ عکس کبھی آزاد تو ہو
    اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔


  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے حبیب صادق کا شکریہ ادا کیا:

    بےباک (06-09-2014)

  3. #2
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,199
    شکریہ
    2,184
    1,256 پیغامات میں 1,631 اظہار تشکر

    جواب: اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں

    اُس وقت کہیں ان آنکھوں میں اس بسرے پل کی یاد تو ہو

    اُن جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو
    شاندار ، بہت ہی اچھے ،
    آپ کا ذوق قابل تعریف ہے
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University