نتائج کی نمائش 1 تا: 3 از: 3

موضوع: اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں

  1. #1
    رکنِ خاص
    تاريخ شموليت
    Jun 2014
    پيغامات
    735
    شکریہ
    171
    123 پیغامات میں 141 اظہار تشکر

    اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں


    اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں
    میں تیرے سامنے انبار لگا دوں لیکن
    کون سے رنگ کا پتھر تیرے کام آئے گا
    سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا
    یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیل پتھر
    جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے
    کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی
    جس پر حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے
    اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیبِ سفید
    اس کے مرمر میں سیاہ خوں جھلک جاتا ہے
    اک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر
    ہاتھ میں تیشہ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے
    جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں
    شعر بھی رقص بھی تصویر و غنا بھی پتھر
    میرے الہام تیرا ذہن ِ رسا بھی پتھر
    اس زمانے میں ہر فن کا نشان پتھر ہے
    ہاتھ پتھر ہیں تیرے میری زبان پتھر ہے
    ریت سے بت نہ بنا اے میرے اچھے فنکار
    ***

  2. #2
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,161
    شکریہ
    2,126
    1,234 پیغامات میں 1,606 اظہار تشکر

    جواب: اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں

    جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں
    بہت اعلی ، شاندار
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

  3. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے بےباک کا شکریہ ادا کیا:

    حبیب صادق (06-11-2014)

  4. #3
    مبتدی
    تاريخ شموليت
    Apr 2018
    پيغامات
    1
    شکریہ
    0
    0 پیغامات میں 0 اظہار تشکر

    جواب: اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں

    میں نے ابھی آپ کی دنیا کا انتخاب کیا

    کیا تم اداس بیٹھتے ہو؟

    رومی

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University