نتائج کی نمائش 1 تا: 1 از: 1

موضوع: ایک پل

  1. #1
    رکنِ خاص
    تاريخ شموليت
    Jun 2014
    پيغامات
    3,629
    شکریہ
    650
    709 پیغامات میں 735 اظہار تشکر

    ایک پل






    آہستگی سے گھٹتی ہوئی سہ پہر کی دھوپ
    دل میں اُتر رہی ہے کسی خواب کی طرح
    نیلے فلک پہ ابر کے ٹکڑے کہیں کہیں
    لرزاں ہیں دل کے ساز پہ مضراب کی طرح
    صحنِ چمن میں ڈولتے رنگوں کے درمیاں
    ہے ایک بے قرار سی خوشبو رُکی ہوئی
    ٹھہرے ہوئے سے وقت کی سرگوشیوں کے بیچ
    تتلی کوئی ہے پھول کے لب پر جھکی ہوئی
    پتے صبا کے پاؤں کی آہٹ کے منتظر
    شاخوں کے درمیاں کوئی حیرت رواں سی ہے
    بیٹھی ہے یوں وہ گھاس پہ پھولوں کے روبرو
    آنکھوں کے آس پاس کوئی کہکشاں سی ہے
    چہرے پہ دھوپ چھاؤں کا میلہ لگا ہوا
    شانوں پہ بے دریغ سے گیسو کھلے ہوئے
    قوسِ قزح نے اپنا خزانہ لُٹا دیا
    رنگت میں اس کی رنگ ہیں سارے گھُلے ہوئے
    آہٹ پہ میرے پاؤں کی دھیرے سے چونک کر
    دیکھا ہے اُس نے مڑ کے مجھے اد ادا کے ساتھ
    پھیلی ہے جسم و جاں میں عجب ایک سر خوشی
    خوشبو سی کوئی اُڑنے لگی ہے ہوا کے ساتھ
    ۔۔۔۔۔۔۔۔

  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے حبیب صادق کا شکریہ ادا کیا:

    بےباک (06-16-2014)

آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University